حفظیظ شیخ کرائے کا بندہ ہے،کیوں لائے؟ خواجہ آصف کا حکومت سے سوال

حفیظ شیخ کرائے کا بندہ ہے،کیوں لائے؟خواجہ آصف

قومی اسمبلی اجلاس میں خواجہ آصف نے اظہار خیال کرتے ہوئے ملکی معیشت پر حفیظ شیخ پر سخت تنقید کی اور حکومت سے سوال کیا کہ حفیظ شیخ جیسے لوگ کرائے کہ ہیں انہیں کیوں لے کر آئے؟

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کی زیر صدارت ہوا۔جس میں مسلم لیگ ن کے سینئر رہنماء نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آج ملک میں کورونا کیسز بڑھ گئے ہیں لیکن حکومت کے پاس کوئی پالیسی ہی نہیں ہے پوری عوام کو بے یار و مددگار چھوڑ دیا گیا ہے۔

خواجہ آصف نے اسد عمر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ دل پر ہاتھ رکھ کر بتائیں آپکے پاس کورونا سے متعلق کوئی پالیسی ہے؟وزیر اعظم کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ یہ کیسا وزیر اعظم ہے جو پہلے کورونا کو زکاف کہتا رہا ہر آئے دن بیان بدلتا رہا۔

لیگی رہنماء کا کہنا تھا کہ عمران خان کے پچھلے تین ماہ کے بیانات کو کسی دماغی ڈاکٹرز کے سامنے رکھے وہ ڈاکٹر بتائے گا ہمارے وزیر اعظم کی ذہنی کیفیت کیا ہے؟

خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ طبی عملے کو بغیر ساز و سامان کے جہاد کے لیئے بھیج دیا گیا۔یہ کیسی پالیسی ہے ؟انہوں نے کہا کہ خدارا اپنی پالیسی درست کریں

ملک کی معاشی صورتحال پر بات کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ موجودہ بجٹ ڈرامہ ہے یہ مزید بجٹ لائیں اور اس میں ٹیکس لگائیں گے۔انہوں نے حفیظ شیخ پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہ کرائے کہ لوگ ہیں انہیں کیوں لایا گیا؟
خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر اور مشیر خزانہ حفیظ شیخ کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا مطالبہ بھی کردیا

تبصرے