کہیں خوشی کہیں غم،تعلیمی ادارے کھولنے کا اصولی فیصلہ کرلیا گیا

کہیں خوشی کہیں غم،تعلیمی ادارے کھولنے کا اصولی فیصلہ کرلیا گیا
کہیں خوشی کہیں غم،تعلیمی ادارے کھولنے کا اصولی فیصلہ کرلیا گیا

کورونا کے باعث بند ملک بھر کے تعلیمی ادارے اب 15ستمبر کو کھولنے کا فیصلہ کرلیا گیا اور اس فیصلے کے بعد سکول جانے والے بچوں ،کالجز اور یونیورسٹی جانے والے جوانوں سبھی کی موجیں بھی ختم ہوگئیں۔


مانگی بڑی دعائیں ،نہ کھلیں اسکولز،کالج اور نہ ہی یونیورسٹیز،مگربچوں اب تو جانا ہوگا اسکول،نہ کوئی چلے گا بہانہ اور نہ ہی والدین کریں گے کوئی وجہ قبول،کیونکہ کرلیا بہت آرام جناب۔۔!!

خبر کی تفصیلات آپکو دیتے چلیں کہ وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کی زیر صدارت بین الصوبائی وزرائے تعلیم کا اجلاس ہوا جس میں تمام صوبائی وزرائے تعلیم وڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے جبکہ چیئرمین اور ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایچ ای سی نے بھی شرکت کی۔وزارت صحت کے حکام نے اجلاس کو بریفنگ دی جس کی روشنی میں 3 مراحلے میں تعلیمی ادارے کھولنے کا فیصلہ کیا گیا۔پہلے مرحلے میں 15 ستمبر سے نویں، میٹرک، کالج اور یونی ورسٹی کی کلاسز کو کھولا جائے گا۔ بڑی جماعتوں کی کلاسز کھولنے کے بعد کورونا وائرس کے صورتحال اور کیسز کا جائزہ لیا جائے گا۔صورتحال کا جائزہ لینے کے ایک ہفتے بعد دوسرے مرحلے میں 23 ستمبر سے چھٹی سے آٹھویں جماعت میں تدریسی عمل کی اجازت دی جائے گی۔تیسرے اور آخری مرحلے میں 30 ستمبر سے پہلی سے پانچویں تک کی کلاسز کو کھولا جائے۔ تعلیمی اداروں میں کورونا ایس او پیز پر سختی سے عملدرآمد ہوگا اور طلبا کو ماسک لازمی پہننا ہوگا۔

تبصرے