ہر وہ منبر ،ہر وہ مجلس ،ہر وہ بیان ضرار ہے،جہاں سے نفرت پھیلائی جائے

ہر وہ منبر ،ہر وہ مجلس ،ہر وہ بیان ضرار ہے،جہاں سے نفرت پھیلائی جائے
ہر وہ منبر ،ہر وہ مجلس ،ہر وہ بیان ضرار ہے،جہاں سے نفرت پھیلائی جائے

دنیا بھر میں مذہب ایک مقدس چیز ہوتی ہے۔مذہب جس کا بنیادی مقصد لوگوں کی اصلاح مقصود ہوتی ہے مگر دنیا بھر میں مذہب کو سٹریجیک لحاظ سے استعمال کیا گیا اور اب تک کچھ ایسی ہی صورتحال ہے۔

بات کریں اگر ملک پاکستان کی ہمارے یہاں اکثر مذہب کو اپنے اپنے ذاتی مفاد کے لیئے استعمال کیا گیا۔ذاتی مفاد کی وجہ سے ملک میں انتشار پھیلا،نفرتیں پورے معاشرے میں بڑھیں،کوئی ایسا گھر نہ تھا جو اس نفرت سے متاثر نہ ہو ا ہو۔ہر گھر سے جنازے اٹھائے گے ۔

اس فرقہ واریت میں ہم نے کتنے اپنوں کو قبروں میں اتارا؟شاید ہمیں اب تعداد بھی یاد نہ ہو۔اس ملک کے انمول موتی بھی اس تعصب کی جنگ کی نظر ہوئے۔امجد صابری ہوں،یونیورسٹیز کے استاتذہ ہوں۔ڈاکٹرز ہو ں علماء کرام ہوں۔سبھی طبقات اس نفرت کی جنگ میں بے قصور جلا دیئے گئے۔

سوال جو کہ خود سے ہے،ان سب سے حاصل کیا ؟فائدہ کس کا؟

کیا اس جنگ میں ملک کی معیشت بڑھی؟ لوگوں کو روزگار ملا؟بے روزگاری ختم ہوئی؟دین کی خدمت ہوئی؟دین مزید پھیلا؟خلافت و امامت کے قیام کے لیئے راہ ہموار ہوئی؟نہ،کچھ بھی نہیں ہوا۔بلکہ دین سے مزید اپنے پرائے سبھی متنفر ہوئے اور ہورہے ہیں۔

ملک میں پھر سے اس جنگ کو ہوا دینے کی کوشش کی جارہی ہے۔اس نفرت کی جنگ جس میں ملک کے ساتھ ساتھ دین کو بدنام کرنے کی کوشش کی گئی پھر اس جنگ کو خناس افراد اپنی خناسیت سے شروع کرنے کی کوششوں میں مگن ہیں۔کل کراچی میں جامعہ فاروقیہ کے مہتم مولا نا ڈاکٹر عادل خان کو قتل کردیا گیا۔ان کا قتل باقاعدہ ایک منصوبے کے تحت کیا گیا ۔پولیس کے مطابق ملزمان انکا پیچھے کر رہے تھے اور موقع پاتے ہی انہوں نے مولانا ڈاکٹر عادل خان کو نشانہ بنایا۔

مولانا ڈاکٹر عادل خان کے قتل کے بعد تمام مکاتب فکر کے علماء کرام نے اس واقعے کی شدید مذمت کی ۔جو کہ خوش آئند بات ہے۔کیونکہ اب لاز م ہے کہ تمام مکاتب فکر کو ایسے افرا د سے اظہار برات کرنا ہوگا جو نفرتیں بکھیرنے میں مگن ہیں۔

وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا اہم بیان سامنے آیا ہے انہوں نے کہ مولانا ڈاکٹر عادل خان کے قتل کے پیچھے بھارت ہے جو یہ چاہتا ہے ملک پاکستان میں فرقہ واریت کی جنگ کو تقویت ملے ۔

قارئین محترم! ذمہ داری،ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا بڑا ضروری ہے۔ایسے وقت میں جب حالات ہم سبھی نے بہت کچھ کھو کر درست کیئے ایسا نہ ہو ہم پھر ہم کسی مسجد ضرار کے فتوں میں آکر دوبارہ خود کو اپنے ملک کو وہاں دھکیل دیں۔یہ یاد رکھنا ضروری ہے جوفتنہ پھیلا رہا ہے وہ منبر ضرار ہے۔جو مجلس فتنے کے باعث بنے وہ ضرار ہے۔جو بیان فتنے کا باعث بنے وہ ضرار ہے۔

کیو نکہ ان سب سے دین و ملک کے دشمن کو فائدہ اور تقویت ملے گی نہ کہ شیعہ ،سنی،وہابی دیوبندی ،بریلوی کو ۔۔!!

تبصرے