موبائل کا نشہ

موبائل کا نشہ
موبائل کا نشہ

آج کل ہم جس چیز کے ساتھ ہمارا سب سے زیادہ وقت گزرتا ہے وہ ہمارا موبائل فون ہے۔ہم کہیں بھی ہوں، کچھ بھی کر رہے ہیں یہ ہمارے پاس ہی ہوتا ہے۔ چاہے ہم کھانا کھا رہے ہیں ٹی وی دیکھ رہے ہیں یا کوئی اور کام کر رہے ہیں یہ اکثر ہمارے ہاتھ میں ہی ہوتا ہے۔

اگر آپ کوئی ضروری کام کر رہے ہیں اور کوئی آپ کو بلائے تو آپ نہیں جاتے کیونکہ آپکا کام بہت اہم ہوتا ہے۔ لیکن آپ کتنا ہی ضروری کام کیوں نہ کررہے ہوں اُس دوران اگرموبائل فون کی گھنٹی بج جائے تو آپ نے اُسے لازمی اٹھائیں گے۔ یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ موبائل فون انسانوں کے استعمال کے لیے بنایا گیا تھا لیکن اب یہ انسانوں کو استعمال کر رہا ہے۔ اس کا استعمال انسان کے کنٹرول میں ہونا چاہئے لیکن انسان یہ بات جانتا ہے کہ موبائل فون کس طرح سے اُس کی زندگی کو کنٹرول کر رہا ہے،اُس کے وقت کو برباد کر رہا ہے،

اُس کی صلاحیتوں کولکڑی کولگی دیمک کی طرح ختم کرتا جا رہا ہے حتیٰ کہ انسانی رشتوں میں دوریاں پیدا کر رہا ہے۔ انسان یہ سب کچھ جانتے ہوئے بھی اِس کے استعمال کو کم نہیں کرتے اور اِس کو اپنی مجبوری بناکر اپنے ساتھ باندھ لیا ہے۔ یہاں تک کہ انسانی جسم کی طرح زندگی کا ایک اہم حصہ بن گیا ہے۔ اس بات کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ موبائل فون برا ہے بلکہ کوئی چیز بھی اچھی یا بری نہیں ہوتی،اُس چیز کا استعما ل ہی اُسے اچھا یا برا بناتا ہے۔ اگر موبائل کو سمجھداری سے استعمال کیا جائے تو یہ بہت ہی فائدے مند ہے لیکن آجکل موبائل فون کا جس طرح استعمال ہو رہا ہے اُس میں سے صرف تیس فیصد ہی صرف فائدہ حاصل ہو رہا ہوتا ہے جبکہ

باقی ستر فیصد وقت بربا د کرنے میں ہی استعما ل ہو رہا ہے کیونکہ ستر فیصد کیسز میں انسان موبائل فون کو کنٹرول نہیں کررہا ہوتا بلکہ موبائل انسان کو کنٹرول کر رہا ہوتا ہے۔ موبائل ایپلیکیشنز کمپنیوں نے اپنی ایپز ایسے ڈیزائن کی ہوتی ہیں کہ وہ انسان کو اپنے ساتھ جوڑے رکھتی ہیں۔ ایپلیکشنز ڈیرائن کرنے والے ماہر اس بات پر زیادہ توجہ دیتے ہیں کہ استعمال کرنے والااُن کی بنائی ہوئی ایپ کو اپنا زیادہ سے زیادہ وقت دے۔ اُن کی کوشش ہوتی ہے کہ ایپ ایسی ڈیزائن کی جائے کہ اُسے استعمال کرتے ہوئے وقت کا پتہ ہی نہ چلے۔ اِس لیے انسان کو یہ کوشش کرنی چاہیے کہ

اپنے موبائل میں غیر ضروری ایپلیکیشنز کو ختم کردیں یا پھر اُس ایپلیکشن کا نوٹیفیکیشن بند کردیں کیونکہ ایپلیکشنز اور اُن کا نوٹیفیکیشن سسٹم ہی ایسا ہوتا ہے کہ انسان کو اپنی طرف مائل کرتا ہے۔ آپ کبھی بھی موبائل فون کو اپنے سرہانے رکھ کر نہ سوئیں، اکثر ہمارا یہی بہانہ ہوتاہے کہ ہم صبح اٹھنے کے لیے الارم بھی موبائل پر لگاتے ہیں اور اُس کا نتیجہ یہ ہوتاہے کہ الارم کو بند کرتے ہی ہم آئے ہوئے نوٹیفیکیشنز کو دیکھنا شروع کر دیتے ہیں اور اِس طرح ہمارے دن کا آغاز بھی موبائل سے ہو جاتا ہے۔ ہمیں چاہئے کہ کم از کم صبح اٹھنے کا الارم لگانے کے لیے الارم والی گھڑی کا استعمال کریں تاکہ

صبح اٹھتے ہی موبائل کو دیکھنے کی بجائے ہم اپنے دن کا اچھا آغاز کر سکیں۔ ہم روزانہ کی بنیاد پر صبح ورزش کر سکیں۔آج سے ہی اپنے کام پر توجہ دینے کو زندگی کا معمول بنا لیں اور موبائل کو صرف ضرورت پڑنے پر ہی استعمال کریں۔ اکثر ایسا ہوتا ہے کہ ہم موبائل کو کسی کام سے اٹھاتے ہیں لیکن جیسے ہی موبائل کو اوپن کرتے ہیں تو واٹس ایپ پر کوئی نہ کوئی پیغام آیا ہوتاہے اُس پیغام کا جواب دینے کے بعد ہم فیس بک پر اپنا قیمتی وقت ضائع کرنے لگ جاتے ہیں یا پھر یوٹیوب پر چلے جاتے ہیں۔

اس طرح ہم موبائل میں ایسے کھو جاتے ہیں کہ ہمیں یا د ہی نہیں رہتا کہ ہم نے موبائل کس کام کے لیے اٹھایا تھا۔ موبائل کا صحیح استعمال کرنے کے لیے ضروری ہے کہ جب بھی موبائل کو کسی کام کی وجہ سے اٹھائیں تویہ ذہن میں رکھیں کہ آپ نے کس کام کے لیے موبائل اٹھایا ہے اور موبائل کو اوپن کرنے کے بعد وہی کام کریں اور کام ہو جانے پر اُسے واپس رکھ دیں۔

ہمیشہ یہ بات یاد رکھیں کہ کوئی بھی چیز اچھی یا بری نہیں ہوتی بلکہ یہ انسان کے استعمال کرنے پر انحصار کرتا ہے۔ موبائل کا استعمال صرف اچھے کام اورعلم حاصل کرنے کے لیے کریں یا پھر کچھ سیکھنے کے لیے استعمال کریں۔اگر آپ موبائل کو استعما ل کرنے کا طریقہ بدل دیں اور اِسے سمجھداری سے استعمال کریں گے تو زندگی میں آنیوالے بدلاؤ آپ خود ہی محسوس کریں گے۔

تبصرے