جے کے رولنگ کی ایسی کہانی جو آپکی زندگی بدل کر رکھ دے

جے کے رولنگ کی ایسی کہانی جو آپکی زندگی بدل کر رکھ دے
جے کے رولنگ کی ایسی کہانی جو آپکی زندگی بدل کر رکھ دے

جے کے رولنگ جو کہ معروف کتا ب ہیری پوٹر(Harry Poter)کی مصنف ہیں اُس کی ساری زندگی ہی مشکلوں سے بھری ہوئی تھی۔ جے کے رولنگ کی زندگی کا سب سے تکلیف دہ لمحہ وہ تھا جس دن اسکی والدہ انتقال ہوا۔ رولنگ کی عمر اُس وقت پچیس سال تھی۔

ماں کی وفات نے اسے بہت متاثر کیا تھا وہ مکمل ٹوٹ چکی تھی اور اکیلی رہ گئی تھی۔ یہ واقعہ تب پیش آیا تھا جب اُسے ہیر ی پوٹر کتاب لکھتے ہوئے صرف چھ ماہ ہی گزرے تھے۔ اُسے اِس بات کا بھی افسوس تھا کہ اُس کی ماں اُس کے ناول کو نہیں دیکھ سکے گی۔ اپنی ماں کے مرنے کے بعد وہ پرتگال چلی گئی اور 1992میں اُسکی شادی ہوگئی۔ جلد ہی اُس کے ہاں ایک بچی ہوئی جس کا نام انہوں نے جیسیکا رکھا لیکن زندگی اُس کے لیے اور مشکل ہوتی گئی۔

اُس کی شادی زیادہ دیرتک چل نہ سکی اور صرف تیرہ مہینے کے بعد ہی اُس کی شادی طلاق پر ختم ہوگئی۔ رولنگ اپنی بیٹی اور ہیری پوٹر کے پہلے تین باب (Chapters) کو لے کر ایڈن برگ آگئی۔ وہ اُس کی زندگی کا مشکل ترین دور تھا۔اُس کے پاس کوئی نوکری نہیں تھی۔ اپنی چھوٹی سی بچی کر ساتھ وہ حکومت کی جانب سے ملنے والی معمولی سی رقم پر انتہائی غربت میں گزارہ کر رہی تھی۔ چند ماہ چلنے والی شادی نے اُسے بری طرح متاثر کیاتھا۔اِسے اب اپنی بچی کو بھی اکیلے سنبھالنا تھا۔ انتہائی غربت اور مایوسی کے عالم میں اکیلے ہی اپنی بچی کو سنبھالنا اور ہیری پوٹر کو لکھنا ایک مشکل کام تھا لیکن

اُس نے ہمت نہیں ہاری۔ جے کے رولنگ کا کہنا ہے کہ وہ اِس وقت ہر لحاظ سے مکمل طور پر ناکام زندگی گزار رہی تھی۔ وہ انتہائی مایوس اور افسردہ تھی۔کئی بار تو اُس نے خود کشی کرنے کا بھی سوچا لیکن بیٹی کے خیال نے اُسے مرنے نہیں دیا۔اُس مشکل ترین دور میں رولنگ نے ہیر پوٹر کو مکمل کیا۔ لکھنے کے بعد رولنگ نے اُسے بارہ مختلف پبلشرز کو بھیجنا تھا۔ وہ چونکہ انتہائی غریب تھی اس لیے اُس کے پاس کمپیوٹر نہیں تھا اور نہ ہی اُس کے پاس اتنے پیسے تھے کہ وہ ہاتھ سے لکھے ناول کی فوٹو کاپیاں کروا سکے۔ اس لیے اُسے تقریباً چار سو صفحات کے ناول دفعہ ٹائپ کرنا پڑا۔

اُس وقت یہ بہت ہی مشکل کام تھا لیکن رولنگ نے ہار نہ مانی۔اتنی محنت کے بعد بھی کسی ایک پبلشرنے بھی اُسے چھاپنے کی حامی نہ بھری۔ بارہ کے بارہ پبلشرز نے اُسے فضول اور ناکارہ ناول قرار دے دیا۔ رولنگ کے لیے یہ ایک بہت بڑا صدمہ تھا۔ اب اُسے اپنے ناول پر سے اعتماد اُٹھنے لگا تھا۔ کچھ مدت بعد اُس کی قسمت کا ستارہ چمک ہی گیا اور اُس کے لیے امید کی ایک کرن پیدا ہوئی۔ لندن کے ایک پبلشنگ ہاوس کے چیف ایگزیکٹو کی بیٹی کو وہ ناول پسند آگیا۔اپنی بیٹی کی ضد کے ہاتھوں مجبور ہو کر انہوں نے ہیری پوٹر کو پبلش کرنے کا کڑوا گھونٹ بھر ہی لیا۔ کون جانتا تھا کہ یہ فضول قرار دیا جانے والا ناول ایک تاریخ رقم کر دے گا۔

اس ناول نے رولنگ کی زندگی کو بدل کر رکھ دیا۔ آج اس ناول کی دس کروڑ سے زائد کاپیاں بک چکی ہیں اور73زبانوں میں اُس کا ترجمہ ہو چکا ہے۔ آج رولنگ دنیا کے مہنگے ترین اور سب سے زیادہ کمانے والے مصنفوں میں شمار کی جاتی ہیں۔ جے کے رولنگ نے وہ کر دکھایا جو دنیا کے دکھوں اور مایوسیوں میں گھرے انسانوں کے لیے ایک مثال بن گئی۔ اُس نے ہا ر نہیں مانی اوراپنی زندگی کو بدل کر دکھا دیا۔ وہ ایک طلاق یافتہ اور بے روز گار لڑکی سے ایک بہترین مصنف بن گئی لیکن

ایک صرف ایک ہی رات میں نہیں ہوا تھا۔اُسے کئی دکھ اور پریشانیاں ملی لیکن رولنگ نے سب تکلیفوں کا بہادری اور ڈٹ کر سامنا کیا، ہار نہیں مانی، لوگوں کے رویے اُس کی ہمت کو توڑ نہیں سکے۔ اگرآپ کا بھی کوئی خواب ہے تو یہ بات یاد رکھیں کہ لوگ آپکو مسترد کریں گے، آپ کا مذاق اُڑائیں گے اور آپ کی ہمت کو توڑنے کی کوشش کریں گے لیکن آپ نے رکنا نہیں ہے، ہمت نہیں ہارنی چاہے کتنی ہی بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے،اپنے خوابوں کو ادھورا مت چھوڑیئے گا۔ کسی کو کیا پتہ کہ آپ بھی کسی دن تاریخ ہی بدل دیں۔

تبصرے