بھارت پاکستان میں دہشتگردی کے ذریعہ انتشار پھیلانے کی کوشش کررہاہے،وزیراعظم

وزیرستان میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے آج سے جنوبی وزیرستان میں تھری جی اور فور جی انٹرنیٹ سروسزبحال کرنے کا اعلان کردیا۔

اسلام آباد (ویب ڈیسک )تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم عمران نےوانا ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ تاریخ میں کبھی بھی ایسا ہندوستانی وزیر اعظم نہیں تھا جو پاکستان میں انتشار پھیلانا چاہتا ہو ۔ وزیر اعظم نے مزید کہا کہ انہوں نے دہشت گردوں کے ٹیکنا لوجی کے استعمال سے متعلق اپنے سروسز چیف سے بات کی، لیکن اس بات پر اتفاق کیا کہ نوجوانوں کی سہولت زیادہ اہم ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا، میں نے اس بات کی تاکید کی کہ ان خدمات کی بحالی سے نوجوانوں کو ان کی تعلیم میں آسانی ہوگی, انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کی ترجیح نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرکے جنوبی وزیرستان کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنا ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ قبائلی اضلاع کا انضمام عوام کی حمایت کے بغیر ممکن نہیں تھا ۔ وزیر اعظم نے کہا،یہ ایک مشکل کام تھا لیکن جنوبی وزیرستان کے لوگوں نے اسے ممکن بنایا، اس کے لئے میں آپ کو سلام پیش کرتا ہوں ۔

کامیاب نوجوان پروگرام کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ایک شروعات ہے اور حکومت قبائلی اضلاع کی ترقی کے لئے مزید اقدامات کرے گی ۔ وزیر اعظم نے کہا، ہم پہلے سے زیادہ اسکول، کالج کھولیں گے اور ڈبل اسکالرشپ دے گے ۔انہوں نے مزید کہا کہ کنبہ کے ہر فرد کو ہیلتھ انشورنس ملے گا اور وہ000 700 روپے تک کی طبی سہولت حاصل کرسکیں گے ۔ انہوں نے احسان کفالت پروگرام کے تحت مستحق خاندانوں میں چیک بھی تقسیم کیے جبکہ انہیں اس موقع پر احسان پروگرام کے ڈیجیٹل سروے کے بارے میں بھی آگاہ کیا جائے گا ۔ وزیر اعظم نے وانا میں قبائلی قابل ذکر افراد سے بھی ملاقات کی اور کامیاب نو جوان لون اسکیم اور یوتھ انٹرنشپ اسکیم کے کامیاب درخواست دہندگان میں چیک تقسیم کیے ۔ قبائلی ضلع میں ان کی دیگر مصروفیات میں مولا خان سرائے میں جدید سہولیات والے ایک اسپتال کا افتتاح اور علاقے کے قابل افراد سے ایک اور ملاقات بھی شامل تھی ۔

تبصرے