1952کاایسا خوفناک واقعہ کہ روح کانپ اٹھے

1952کاایسا خوفناک واقعہ کہ روح کانپ اٹھے
1952کاایسا خوفناک واقعہ کہ روح کانپ اٹھے

یہ واقعہ 1952کا ہے جب جرمنی کے گاؤں باوایہ میں ایک لڑکی کی پیدائش ہوئی جس کا نام انا الزبط مائیکل رکھا گیا لیکن اسے مائیکل سے پکارا جاتا تھا۔ مائیکل گھر میں اپنے ماں باپ اور اپنی دو بہنوں کیساتھ رہتی تھی۔ وقت گزرتا گیا اور مائیکل بڑی ہوتی گئی۔

مائیکل اب سولہ برس کی ہو چکی تھی اور انتہائی خوبصورت اور دلکش نظر آنے والی لڑکی تھی مگر کسی کو یہ معلوم نہیں تھا کہ ایک شام مائیکل کی زندگی کو برباد کر دے گی۔اس شام مائیکل اپنے کمرے میں اکیلی تھی کہ اچانک مائیکل کو دورہ پڑا۔ مائیکل نے مدد کے لیے گھر والوں کو بلانا چاہا مگر زبان نے مائیکل کا ساتھ نہیں دیا۔ مائیکل کافی دیر تک ایسے ہی تڑپتی رہی۔ ایسا لگ رہا تھا کہ کسی نے مائیکل کو جھکڑ لیا ہو۔

کافی دیر کے بعد جب مائیکل کے گھر والے مائیکل کے کمرے میں پہنچے تو مائیکل کو تڑپتے دیکھ کر چیخ اٹھے اور مائیکل کو ہسپتال لے گئے۔ڈاکٹروں نے کافی ٹیسٹ کیے لیکن کوئی خاص بیماری سامنے نہ آسکی تو پھر ڈاکٹروں نے مائیکل کے گھر والوں کو بتایا کہ مائیکل کو مالنٹریشن ہو گیا ہے مطلب مائیکل اپنی ضرورت سے انتہائی کم خوراک استعمال کر رہی تھی جس کی وجہ سے کمزور ہوئی اور ذہنی دباو کے باعث مائیکل کو دورہ پڑا۔ ڈاکٹروں نے مائیکل کا علاج شروع کردیا تھا۔ اب مائیکل دوائیوں کا استعمال کرنے لگ گئی تھی۔ کافی عرصہ گزرنے کے بعد مائیکل دوائیوں کا استعمال تو کر رہی تھی لیکن

دوائیوں کے استعمال کے باوجود مائیکل کی حالت دن بدن خراب ہوتی جارہی تھی۔ اُسے آئے روز دورہ پڑتا اور وہ گھر والوں کو ایک ہی بات کہتی تھی کہ اُسے کچھ آوازیں سنائی دیتی ہیں۔مائیکل کی حالت سے ایسے لگتا تھا کہ جیسے اُسے اندر سے کسی نے جھکڑ لیا ہو اور اُس کا خون چوستا جا رہا ہو۔مائیکل کی حالت دن بدن خراب ہوتی جارہی تھی۔ گھر والے ڈاکٹر وں سے تنگ آ چکے تھے کیونکہ مائیکل کے اوپر دوائیوں کا کوئی اثر نہیں ہو رہا تھا۔ گھر والوں نے چرچ کے ایک پادری کے پاس جانے کا سوچا۔ 1978میں مائیکل کے گھر والے چرچ کے ایک پادری کے پاس گئے اور اُنہیں مائیکل کی حالت کے بارے میں بتا یا۔

چرچ کے پادری نے مائیکل کا علاج کرنے کے سے منع کردیاتھا۔ کافی عرصہ گزر گیا لیکن مائیکل کی حالت ٹھیک ہونے کی بجائے مزید خراب ہوتی چلی گئی۔ مائیکل کے گھر والوں نے ایک بار پھر ایک اور پادری کے پاس گئے اور اپنی بیٹی کی حالت کے بارے میں بتایا۔ چرچ کا پادری مائیکل کا علاج کرنے کے لیے تیار تو ہوگیا لیکن اُس نے ایک شرط بتائی۔ اُس نے کہا کہ وہ مائیکل کا علاج تو کرے گا لیکن اِ س پورے علاج کو ریکارڈ کرے گا۔ مائیکل کے گھر والے رضا مند ہو گئے تھے۔

پادری نے مائیکل کا تین طرح سے علاج کیا اور اِ س پورے علاج کو ریکارڈ بھی کیا۔ یہ ریکارڈیں آج بھی یوٹیوب پر موجود ہے جسے سن کر ہر انسان کا دل دہل جاتا ہے۔ اِس علاج کے دوران مائیکل کی موت واقع ہو چکی تھی اور پادری کو گرفتار کر لیا گیا تھا اور اُسے تین سال کی سزا ہوئی۔ بعد میں مائیکل کے گھر والوں نے مداخلت کی اور پادری کی سزا کم کر کے چھ مہینے کر دی گئی تھی۔2005میں مائیکل کی زندگی پہ ایک فلم بھی بنائی گئی تھی جس کا نام (The Exorcism of Emily Rose) آپ لوگ آج بھی یوٹیوب پہ مائیکل کی ریکارڈیں سن سکتے ہیں۔

تبصرے